القرآن الحکیم (اردو ترجمہ)

حضرت شاہ عبدالقادر

سورۃ الانفال

Previous           Index           Next

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

 

تجھ سے پوچھتے ہیں حکم غنیمت کا۔

تُو کہہ، مالِ غنیمت اﷲ کا ہے اور رسول کا۔

سو ڈرو اﷲ سے اور صلح کرو آپس میں ،

اور حکم میں چلو اﷲ کے اور اسکے رسول کے، اگر ایمان رکھتے ہو۔

.1

 ایمان والے وہی ہیں کہ جب نام آئے اﷲ کا، ڈر جائیں دل ان کے،

اور جب پڑھئے ان پراس کے کلام زیادہ آئے ان کو ایمان،

اور اپنے رب پر بھروسا رکھتے ہیں۔

.2

جو کھڑی رکھتے (قائم کرتے) ہیں نماز اور ہمارا دیا کچھ خرچ کرتے ہیں۔

.3

وہی ہیں سچے ایمان والے،

اُن کو درجے ہیں اپنے رب پاس اور معافی (بخشش) اور روزی آبرو (عزت) کی۔

.4

جیسے نکالا تجھ کو تیرے رب نے تیرے گھر سے درست (حق) کام پر اور ایک جماعت ایمان والی نہ راضی تھی۔

.5

تجھ سے جھگڑتے تھے درست (حق) بات میں، واضح ہو چکے پیچھے،

(اور انکا حال یہ تھا) گویا ان کو ہانکتے ہیں موت کی طرف، آنکھوں دیکھتے۔

.6

 اور جس وقت وعدہ دیتا ہے اﷲ تم کو، ان دو جماعت میں سے ایک کہ تم کو ہاتھ لگے گی،

اور تم چاہتے تھے کہ جس میں کانٹا نہ لگے وہ (کمزور گروہ) ملے تم کو،

اور اﷲ چاہتا تھا کہ سچا کرے سچ کو اپنے کلاموں سے، اور کاٹے پیچھا (جڑ) کافروں کا۔

.7

تا (کہ) سچا کرے سچ کو اور جھوٹا کرے جھوٹ کو، اور اگرچہ نہ راضی ہوں گنہگار۔

.8

جب تم لگے فریاد کرنے اپنے رب سے تو پہنچا تمہاری پکار کو ،کہ میں مدد بھیجوں گا تمہاری ہزار فرشتے جنگی، پیچھے لگے آئیں۔

.9

 اور یہ تو دی اﷲ نے فقط خوشخبری اور تا (کہ) چین پکڑیں (مطمئن ہوں) دل تمہارے۔

اور مدد نہیں (آتی کوئی) مگر اﷲ سے۔

(یقیناً) اﷲ زور آور ہے حکمت والا۔

.10

 جس وقت ڈال دی تم پر اونگھ اپنی طرف سے تسکین کو

اور اتارا تم پر آسمان سے پانی کہ اس سے تم کو پاک کر ے اور دُور کرے تم سے شیطان کی نجاست،

اور محکم گرہ (مضبوط کر) دے تمہارے دل پر، اور ثابت کرے (جما دے) تمہارے قدم۔

.11

جب حکم بھیجا تمہارے رب نے فرشتوں کو، کہ میں ساتھ ہوں تمہارے سو تم دل ثابت کرو مسلمانوں کے۔

میں ڈال دوں گا دل میں کافروں کے دہشت۔

سو مارو اوپر گردنوں کے اور مارو ان کے پُور پُور (جوڑ جوڑ) ۔

.12

یہ اس واسطے کہ وہ مخالف ہوئے اﷲ کے اور اسکے رسول کے،

اور جو کوئی مخالف ہو اﷲ کا اور اُسکے رسول کا، تو اﷲ کی مار سخت ہے۔

.13

یہ (سزا) تو تم چکھ لو، اور جان رکھو کے منکروں کو ہے عذاب دوزخ کا۔

.14

 اے ایمان والو! جب بھڑو (لڑو) تم کافروں سے میدان جنگ میں، تو مت دو (پھیرو) ان کو (سے) پیٹھ ۔

.15

 اور جو کوئی اُن کو پیٹھ دے اُس دن، مگر یہ (سوائے اسکے) کہ ہنر (چال) کرتا ہو لڑائی کا یا جا ملتا ہو فوج میں،

سو وہ لے پھرا غضب اﷲ کا، اور اس کا ٹھکانا دوزخ ہے۔

اور کیا بُری جگہ ٹھہرا۔

.16

سو (حقیقت یہ نہیں کہ) تم نے ان کو نہیں مارا، لیکن اﷲ نے مارا (اُن کو) ،

اور تُو نے نہیں پھینکی مٹھی خاک جس وقت پھینکی تھی، لیکن اﷲ نے پھینکی،

اور کیا (اﷲ کرنا) چاہتا تھا ایمان والوں پر، اپنی طرف سے خوب احسان۔

تحقیق (یقیناً) اﷲ ہے (سب) سنتا جانتا۔

.17

 یہ تو ہو چکا، اور جان رکھو کہ اﷲ سست (کمزور) کریگا تدبیر کافروں کی۔

.18

 (اے کافرو!) اگر تم چاہو فیصلہ، سو پہنچ چکا تم کو فیصلہ،

اور اگر باز آؤ تو تمہارا بھلا ہے۔اور اگر پھرو (تم دوبارہ کرو) گے، تو ہم بھی پھر کریں گے۔

اور (ہر گز) کام نہ آئے گا تم کو تمہارا جتھا، اگرچہ بہت ہوں،اور جانو کے اﷲ ساتھ ہے ایمان والوں کے۔

.19

 اے ایمان والو! حکم پر چلو اﷲ کے اور اسکے رسول کے، اور اس سے مت پھرو (منہ موڑو) سُن کر۔

.20

 اور ویسے مت ہو، جنہوں نے کہا ہم نے سنا، اور وہ سنتے نہیں۔

.21

بدتر سب جانوروں (جانداروں) میں اﷲ کے پاس وہی بہرے گونگے ہیں جو نہیں بوجھتے(عقل رکھتے) ۔

.22

 اور اگر اﷲ جانتا ان میں کچھ بھلائی، تو اُن کو سناتا (سننے کی توفیق دیتا) ۔

اور جو اُن کو سنائے تو الٹے بھاگیں منہ پھیر کر(بے رخی سے) ۔

.23

 اے ایمان والو! مانو حکم اﷲ کا اور رسول کا، جس وقت بلائے تم کو ایک کام پر جس پر تمہاری زندگی ہے۔

اور جان لو، کہ اﷲ روک لیتا ہے آدمی سے اسکے دل کو،

اور یہ کہ اس پاس تم جمع ہو گے۔

.24

 اور بچتے رہو اس فساد سے، کہ نہ پڑے گا تم میں سے ظالموں پر چُن کر۔

اور جان لو کہ اﷲ کا عذاب سخت ہے۔

.25

 اور یاد کرو جس وقت تم تھوڑے تھے، مغلوب پڑے ہوئے ملک (زمین) میں،

ڈرتے تھے اُچک لیں تم کو لوگ، پھر اس نے تم کو جائے (پناہ) دی اور زور دیا (مضبوط کیا) اپنی مدد سے،

اور روزی دی تم کو ستھری چیزیں، شاید تم حق مانو۔

.26

 اے ایمان والو! چوری (خیانت) نہ کرو اﷲ سے اور رسول سے،یا چوری (نہ خیانت) کرو آپس کی امانتوں میں جان کر۔

.27

 اور جان لو کہ تمہارے مال اور اولاد جو ہیں، خراب کرنے والے ہیں،اور یہ کہ اﷲ پاس بڑا ثواب ہے۔

.28

 اے ایمان والو! اگر ڈرتے رہو گے اﷲ سے تو کر دیگا تم میں فیصلہ،اور اتارے گا تم سے تمہارے گناہ اور تم کو بخشے گا،

اور اﷲ کا فضل بڑا ہے۔

.29

 اور جب فریب بنانے لگے کافر کہ تجھ کو بٹھا (قید کر) دیں یا مار ڈالیں یا نکال دیں۔

اور وہ بھی فریب (چال) کرتے تھے اور اﷲ بھی فریب (چال) کرتا تھا،اور اﷲ کا فریب (کی چال) سب سے بہتر ہے۔

.30

 اور جب کوئی پڑھے اُن پر ہماری آیتیں، کہیں ہم سن چکے، ہم چاہیں تو کہہ لیں ایسا،یہ کچھ نہیں احوال ہیں پہلوں کے۔

.31

 اور جب کہنے لگے، کہ یا اﷲ! اگر یہی دین (قرآن) حق ہے تیرے پاس سے،تو ہم پر برسا پتھر آسمان سے، یا لا ہم پر دُکھ کی مار۔

.32

اور اﷲ ہر گز نہ عذاب کرتا اُن کو، جب تک تُو تھا ان میں،

اور اﷲ نہ عذاب کرےگا اُن کو، جب تک بخشواتے رہیں۔

.33

 اور ان میں کیا ہے، کہ عذاب نہ کرے اﷲ؟ اور وہ روکتے ہیں مسجدِ حرام سے، اور اسکو اختیار والے نہیں۔

اسکے اختیار والے وہی ہیں جو پرہیزگار ہیں، لیکن وہ اکثر خبر نہیں رکھتے۔

.34

 اور اُن کی نماز کچھ نہ تھی، کعبہ کے پاس، مگر سیٹیاں بجانی اور تالیاں۔

سو چکھو عذاب، بدلہ اپنے کُفر کا۔

.35

 جو لوگ کافر ہیں، خرچ کرتے ہیں اپنے مال، کہ روکیں اﷲ کی راہ سے۔

سو ابھی اور خرچ کریں گے، پھر آخر ہو گا ان پر پچھتاوا، پھر آخر مغلوب ہوں گے۔

اور جو کافر رہیں گے، دوزخ کو ہانکے (گھیر لے جائیں) جائیں گے۔

.36

تا (کہ) جدا کرے اﷲ ناپاک کو پاک سے، اور رکھے ناپاک کو ایک پر ایک،پھر اس کو ڈھیر کرے سارا، پھر ڈالے اس کو دوزخ میں۔

وہی لوگ ہیں نقصان پانے والے۔

.37

 تُو کہہ دے کافروں کو کہ اگر باز آئیں تو معاف ہو ان کو جو (گناہ) ہو چکا۔

اور اگر پھر وہی کریں گے، تو پڑھ چکی ہے راہ اگلوں کی۔

.38

 اور لڑتے رہو اُن سے جب تک نہ رہے فساد، اور ہو جائے حکم اﷲ کا۔

پھر اگر وہ باز آئیں تو (بیشک) اﷲ اُن کے کام دیکھتا ہے۔

.39

 اور اگر وہ نہ مانیں تو جان لو کہ اﷲ ہے حمایتی تمہارا، کیا خوب حمایتی ہے اور کیا خوب مددگار۔

.40

اور جان رکھو کہ جو غنیمت لاؤ کچھ چیز،سو اﷲ کے واسطے اس میں سے پانچواں حصہ اور رسول کے

اور قرابت والے کے اور یتیم کے اور محتاج کے اور مسافرکے۔

اگر تم یقین لائے ہو اﷲ پر اور اس چیز پر جو ہم نے اتاری اپنے بندے پر، جس دن فیصلہ ہوا، جس دن بھڑیں دو فوجیں۔

اور اﷲ سب چیز پر قادر ہے۔

.41

جس وقت تم تھے ورے کے ناکے (وادی کے اس طرف کے کنارے) اور وہ پرے کے ناکے(کنارے) ، اور قافلہ نیچے اتر گیا تم سے۔

اور اگر آپس میں تم وعدہ کرتے تو نہ پہنچتے وعدے پر،لیکن اﷲ کو کر ڈالنا ایک کام، جو ہو چکا تھا (جسکو ہونا تھا) ،

تا (کہ) مرے جو مرتا (جسکو مرنا) ہے سوجھ کر(واضع دلیل سے) اور جئے جو جیتا (جسکو جینا) ہے سوجھ کر (واضع دلیل سے) ۔

اور (بیشک) اﷲ سنتا ہے جانتا۔

.42

جب اﷲ نے وہ دکھائے تیرے خواب میں تھوڑے۔

اور اگر وہ تجھ کو بہت دکھاتا، تو تم لوگ نا مردی کرتے (ہمت ہار جاتے) ، اور جھگڑا ڈالتے کام میں، لیکن اﷲ نے بچا لیا۔

(بیشک) اسکو معلوم ہے جو بات ہے دلوں میں۔

.43

 اور جب تم کو دکھائی وہ فوج، وقت ملاقات (لڑائی) کے، تمہاری آنکھوں میں تھوڑی،

اور تم کو تھوڑا دکھایا اُن کی آنکھوں میں، تا (کہ) کر ڈالے اﷲ ایک کام جو ہو چکا (کر رہنا) تھا۔

اور اﷲ تک پہنچ ہے ہر کام کی۔

.44

 اے ایمان والو! جب بھڑو کسی فوج سے، تو ثابت رہو،اور اﷲ کو بہت یاد کرو، شاید تم مراد پاؤ۔

.45

اور حکم مانو اﷲ کا اور اس کے رسول کا،

اور آپس میں نہ جھگڑو، پھر نا مرد (بزدل) ہو جاؤ گے، اور جاتی رہے(اُکھڑ جائے) گی تمہاری باؤ (ہَوا) ،

اور ٹھہرے رہو (صبر کرو) ۔

(بیشک) اﷲ ساتھ ہے ٹھہرنے (صبر کرنے) والوں کے۔

.46

 اور مت ہو جیسے وہ لوگ، کہ نکلے اپنے گھروں سے اِتراتے، اور لوگوں کو دکھاتے، اور روکتے اﷲ کی راہ سے۔

اور اﷲ کے قابو میں ہے جو کرتے ہیں۔

.47

 اور جس وقت سنوارنے لگا شیطان، ان کی نظر میں ان کے اعمال اور بولا،

کوئی غالب نہ ہو گا تم پر آج کے دن، اور میں رفیق ہوں تمہارا،

پھر جب سامنے ہوئیں دو فوجیں، الٹا پھرا اپنی ایڑیوں پر، اور بولا،

میں تمہارے ساتھ نہیں، میں دیکھتا ہوں جو تم نہیں دیکھتے، میں ڈرتا ہوں اﷲ سے۔

اور اﷲ کا عذاب سخت ہے۔

.48

 جب کہنے لگے منافق لوگ اور جن کے دلوں میں آزار (روگ) ہے، یہ لوگ (مسلمان) مغرور ہیں اپنے دین پر۔

اور (حالانکہ) جو کوئی بھروسہ کرے اﷲ پر، تو (یقیناً) اﷲ زبردست ہے حکمت والا۔

.49

 اور کبھی تُو دیکھے! جس وقت جان لیتے ہیں کافروں کی، فرشتے مارتے ہیں اُنکے منہ پر اور پیچھے،

اور (اب) چکھو عذاب جلنے کا۔

.50

یہ بدلہ ہے اسی کا جو تم نے بھیجا اپنے ہاتھوں، اور اس واسطے کہ اﷲ ظلم نہیں کرتا بندوں پر۔

.51

جیسے دستور (لچھن) فرعون والوں کا، اور جو اُن سے پہلے تھے۔

منکر ہوئے اﷲ کی باتوں سے، سو پکڑا اُن کو اﷲ نے اُن کے گناہوں پر۔

اﷲ زورآور ہے، سخت عذاب کرنے والا۔

.52

یہ اس پر کہا، کہ اﷲ بدلنے والا نہیں نعمت کا جو دی تھی ایک قوم کو، جب تک وہ نہ بدلیں اپنے جیون کی بات (طرزِ زندگی) ،

اور (بیشک) اﷲ سنتا ہے جانتا۔

.53

جیسے دستور فرعون والوں کا، اور جو اُن سے پہلے تھے ،

جھٹلائیں باتیں اپنے رب کی، پھر کھپا (ہلاک کر) دیا ہم نے ان کو انکے گناہوں پر اور ڈبو دیا فرعون والوں کو،

اور (وہ) سارے ظالم تھے۔

.54

بدتر سب جانداروں میں اﷲ کے ہاں وہ ہیں جو منکر ہوئے، پھر وہ نہیں مانتے۔

.55

جن پر تُو نے اقرار کیا ہے ان میں، پھر وہ توڑتے ہیں اقرار ہر بار،اور (اﷲ سے) ڈر نہیں رکھتے۔

.56

سو اگر کبھی تُو پائے انکو لڑائی میں، تو ایسی سزا دے کہ دیکھ کر بھاگیں ان کے پچھلے، شاید وہ عبرت پکڑیں۔

.57

 اور اگر تجھ کو ڈر ہو ایک قوم کی دغا کا، تو جواب دے ان کو برابر کے برابر،

اﷲ کو خوش (پسند) نہیں آتے دغاباز۔

.58

 اور یہ نہ سمجھیں منکر لوگ، کہ وہ بھاگ نکلے۔

 وہ تھکا نہ سکیں گے۔

.59

 اور سر انجام کرو ان کی لڑائی کو، جو پیدا کر سکو زور اور گھوڑے پالنے،

کہ اس سے دھاک پڑے اﷲ کے دشمنوں پر، اور تمہارے دشمنوں پر،

اور ایک اور لوگوں پر سوا ان کے جنکو تم نہیں جانتے، اﷲ ان کو جانتا ہے۔

اور جو خرچ کرو گے اﷲ کی راہ میں، پورا ملے گا تم کو، اور تمہارا حق نہ رہے گا۔

.60

 اور اگر وہ جھکیں صلح کو، تو تُو بھی جھُک اسی طرف، اور بھروسا کر اﷲ پر۔

بیشک وہی ہے سنتا جانتا۔

.61

 اور اگر وہ چاہیں کہ تجھ کو دغا دیں تو تُجھ کو بس (کافی) ہے اﷲ۔

اس نے تجھ کو زور دیا اپنی مدد کا، اور مسلمانوں کا۔

.62

 اور ان کے دل میں اُلفت ڈالی۔

اگر تو خرچ کرتا جو سارے ملک میں ہے تمام، نہ اُلفت دے سکتا اُن کے دل میں۔لیکن اﷲ نے اُلفت ڈالی اُن میں۔

 وہ زورآور ہے حکمت والا۔

.63

 اے نبی! کفایت (کافی) ہے تجھ کو اﷲ اور جتنے تیرے ساتھ ہوئے ہیں مسلمان۔

.64

 اے نبی! شوق دلا مسلمانوں کو لڑائی (جہاد) کا۔

اگر ہوں تم میں بیس شخص ثابت (قدم) ، غالب ہوں (وہ) دو سو پر۔

اور اگر ہوں تم میں سو شخص، غالب ہوں ہزار کافروں پر،

اس واسطے کہ وہ (ایسے) لوگ (ہیں جو) سمجھ نہیں رکھتے۔

.65

 اب بوجھ ہلکا کیا اﷲ نے تم پر، اور جانا تم میں سُستی (کمزوری) ہے۔

سو اگر ہوں تم میں سو شخص ثابت (قدم) ، غالب ہوں دو سو پر۔

اور اگر ہوں تم میں ہزار شخص (ثابت قدم) ، غالب ہوں دو ہزار پر، اﷲ کے حکم سے۔

اور اﷲ ساتھ ہے ثابت (قدم) رہنے والوں کے۔

.66

 نہیں چاہیئے نبی کو کہ اسکے ہاں قیدی آئیں، جب تک نہ خون کرے (کچل دے دشمنوں کو) ملک میں۔

تم چاہتے ہو جنس دنیا کی۔ اور اﷲ چاہتا ہے(تمہارے لئے) آخرت۔

اور اﷲ زورآور ہے حکمت والا۔

.67

 اگر نہ ہوتی ایک بات، کہ لکھ چکا اﷲ آگے (پہلے) سے تو تم کو پڑتا اس (فدیہ) لینے میں بڑا عذاب۔

.68

 سو کھاؤ، جو غنیمت لاؤ حلال ستھری۔

 اور ڈرتے رہو اﷲ سے۔

اﷲ ہے بخشنے والا مہربان۔

.69

 اے نبی! کہہ دے اُن کو جو تمہارے ہاتھ میں ہیں قیدی،

اگر جانے گا اﷲ تمہارے دل میں کچھ نیکی، تو دیگا بہتر تم کو اس سے، جو تم سے چھن گیا، اور تم کو بخشے گا۔

اور اﷲ ہے بخشنے والا مہربان۔

.70

 اور اگر چاہیں گے تجھ سے دغا کرنی، سو دغا کر چکے ہیں پہلے اﷲ سے،پھر اس (اﷲ) نے پکڑوا دیئے(تمہارے ہاتھوں) ۔

اور اﷲ سب جانتا ہے حکمت والا۔

.71

جو لوگ ایمان لائے اور گھر چھوڑا(ہجرت کی) اور لڑے (جہاد) اپنے مال اور جان سے اﷲ کی راہ میں،

اور جن لوگوں نے (انکو) جگہ دی اور (انکی) مدد کی، اور وہ (آپس میں) ایک دوسرے کے رفیق ہیں۔

اور جو ایمان لائے اور گھر نہیں چھوڑا، تم کو اُن کی رفاقت سے کچھ کام نہیں، جب تک گھر نہ چھوڑ آئیں۔

اور اگر تم سے مدد چاہیں دین میں، تو تم کو لازم ہے مدد کرنی، مگر مقابلوں میں ایسوں کے جن میں اور تم میں عہد ہے۔

 اور اﷲ جو کرتے ہو دیکھتا ہے۔

.72

 اور جو لوگ کافر ہیں وہ ایک دوسرے کے رفیق ہیں،

اگر تم یوں نہ کرو گے تو دھوم (فتنہ) مچے گی ملک (زمین) میں، اور بڑی خرابی ہو گی۔

.73

 اور جو لوگ ایمان لائے اور گھر چھوڑے اﷲ کی راہ میں،

اور جن لوگوں نے جگہ (انکو پناہ) دی اور (انکی) مدد کی، وہی ہیں تحقیق (سچے) مسلمان۔

ان کو بخشش ہے، اور روزی عزت کی۔

.74

 اور جو ایمان لائے پیچھے(انکے بعد) ، اور گھر چھوڑ آئے اور لڑے (جہاد کیا) تمہارے ساتھ ہو کر، سو وہ تمہیں میں (سے) ہیں۔

اور (مگر) ناتے والے(رشتے دار) آپس میں حقدار زیادہ ہیں ایک دوسرے کے اﷲ کے حکم میں۔

تحقیق(بیشک) اﷲ ہر چیز سے خبردار ہے۔

*********

.75

Copy Rights:

Zahid Javed Rana, Abid Javed Rana, Lahore, Pakistan

Visits wef 2016

AmazingCounters.com