تفسیر ابن کثیر (عمادالدین ابن کثیر)

مترجم: محمد صاحب جونا گڑھی

سورۃ الضحیٰ

Previous           Index           Next

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

شان نزول

مسند احمد میں ہے :

 حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بیمار ہوگئے اور ایک یا دو راتوں تک آپ تہجد کی نماز کے لیے نہ اٹھ سکے تو ایک عورت کہنے لگی کہ تجھے تیرے شیطان نے چھوڑ دیا اس پر یہ آیتیں نازل ہوئیں (بخاری ومسلم)

حضرت جندب فرماتے ہیں جبرائیل کے آنے میں کچھ دیر ہوئی تو مشرکین کہنے لگے کہ یہ تو چھوڑ دئیے گئے تو اللہ تعالیٰ نے والضحٰی سے ماقلفی تک کی آیتیں اتاریں،

 اور روایت میں ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی انگلی پر پتھر مارا گیا تھا جس سے خون نکلا اور جس پر آپ نے فرمایا:

ھل انت الا اصبع دمیت وفی سبیل اللہ ما لقیت

یعنی تو صرف ایک انگلی ہے اور راہ اللہ میں تجھے یہ زخم لگاہے ۔

 طبعیت کچھ ناساز ہو جانے کی وجہ سے دو تین رات آپ بیدار نہ ہوئے جس پر اس عورت نے وہ ناشائستہ الفاظ نکالے اور یہ آیتیں نازل ہوئیں

 کہا گیا ہے کہ یہ عورت ابو لہب کی بیوی ام جمیل تھی اس پر اللہ کی مار ،

 آپ کی انگلی کا زخمی ہو نا ، اور اس موزوں کلام کا بےساختہ زبان مبارک سے ادا ہونا تو بخاری و مسلم میں بھی ثابت ہے لیکن ترک قیام کا سبب اسے بتانا اور اس پر ان آیتوں کا نازل ہونا یہ غریب ہے ،

ابن جریر میں ہے کہ حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا نے کہا تھا کہ آپ کا رب آپ سے کہیں ناراض نہ ہو گیا ہو؟ اس پر یہ آیتیں اتریں۔

 اور روایت میں ہے کہ جبرائیل علیہ السلام کے آنے میں دیر ہوئی حضور صلی اللہ علیہ وسلم بہت گھبرائے اس پر حضرت حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا نے یہ سبب بیان کیا اور اس پر یہ آیتیں اتریں،

یہ دونوں روایتیں مرسل ہیں اور حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کا نام تو اس میں محفوظ نہیں معلوم ہوتا ہاں یہ ممکن ہے کہ ام المومنین نے افسوس اور رنج کے ساتھ یہ فرمایا، واللہ اعلم،

ابن اسحاق اور بعض سلف نے فرمایا ہے :

 جب حضرت جبرائیل اپنی اصلی صورت میں ظاہر ہوئے تھے اور بہت ہی قریب ہوگئے تھے اس وقت اسی سورت کی وحی نازل فرمائی تھی ۔

 ابن عباسؓ کا بیان ہے کہ وحی کے رک جانے کی بنا پر مشرکین کے اس ناپاک قول کی تردید میں یہ آیتیں اتریں۔

وَالضُّحَى (۱)

قسم ہے چاشت کے وقت کی

وَاللَّيْلِ إِذَا سَجَى (۲)

اور قسم ہے رات کی جب چھا جائے۔

یہاں اللہ تعالیٰ نے دھوپ پڑھنے کے وقت دن کی روشنی، اور رات کے سکون اور اندھیرے کی قسم کھائی جو قدرت اور خلق خالق کی صاف دلیل ہے۔ جیسے اور جگہ ہے:

وَاللَّيْلِ إِذَا يَغْشَى وَالنَّهَارِ إِذَا تَجَلَّى (۹۲:۱،۲)

رات کی قسم جب (دن کو) چھپا لے ‏اور دن کی قسم جب چمک اٹھے ‏

مطلب یہ ہے کہ اپنی اس قدرت کا یہاں بھی بیان کیا ہے ۔

مَا وَدَّعَكَ رَبُّكَ وَمَا قَلَى (۳)

نہ تو تیرے رب نے تجھے چھوڑا ہے اور نہ وہ بیزار ہوگیا ہے۔

وَلَلْآخِرَةُ خَيْرٌ لَكَ مِنَ الْأُولَى (۴)

یقیناً تیرے لئے انجام آغاز سے بہتر ہوگا

اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ تیرے رب نے نہ تو تجھے چھوڑا نہ تجھ سے دشمنی کی، تیرے لیے آخرت اس دنیا سے بہت بہتر ہے ۔

 اسی لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم دنیا میں سب سے زیادہ زاہد تھے ۔ اور سب سے زیادہ تارک دنیا تھے ، آپ کی سیرت کا مطالعہ کرنے والے پر یہ بات ہرگز مخفی نہیں رہ سکتی ۔

مسند احمد میں ہے حضرت عبداللہ بن مسعودؓ فرماتے ہیں :

 حضور صلی اللہ علیہ وسلم بورئیے پر سوئے، جسم مبارک پر بورئیے کے نشان پڑگئے۔ جب بیدار ہوئے تو میں آپ کی کروٹ پر ہاتھ پھیر نے لگا اور کہا حضور صلی اللہ علیہ وسلم ہمیں کیوں اجازت نہیں دیتے کہ اس بورئیے پر کچھ بچھا دیا کریں۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

مجھے دنیا سے کیا واسطہ میں کہاں دنیا کہاں؟

میری اور دنیا کی مثال تو اس راہ رو سوار کی طرح ہے جو کسی درخت تلے ذرا سی دیر ٹھہر جائے پھر اسے چھوڑ کر چل دے۔

یہ حدیث ترمذی میں بھی ہے اور حسن ہے

وَلَسَوْفَ يُعْطِيكَ رَبُّكَ فَتَرْضَى (۵)

تجھے تیرا رب بہت جلد (انعام) دے گا اور تو راضی و خوش ہو جائے گا

فرمایا تیرا رب تجھے آخرت میں تیری امت کے بارے میں اس قدر نعمتیں دے گا کہ خوش ہو جائے ان کی بڑی تکریم ہو گی اور آپ کو خاص کر کے حوض کوثر عطا فرمایا جائے گا ۔ جس کے کنارے پر کھوکلے موتیوں کے خیمے ہوں گے جس کی مٹی خالص مشک کی ہو گی ،

 ایک روایت میں ہے کہ جو خزانے آپ کی امت کو ملنے والے تھے وہ ایک ایک کرکے آپ کو بتا دئیے گئے۔ آپ بہت خوش ہوئے اس پر یہ آیت اتری۔

جنت میں  ایک ہزار محل آپ کو دئیے گئے ہرہر محل میں پاک بیویاں اور بہترین غلام ہیں۔

 ابن عباسؓ تک اس کی سند صحیح ہے اور بہ ظاہر ایسی بات بغیر حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے سنے روایت نہیں ہو سکتی ۔

حضرت ابن عباسؓ فرماتے ہیں ﷺ کی رضامندی میں سے یہ بھی ہے کہ آپ کے اہل بیت میں سے کوئی دوزخ میں نہ جائے۔

حسنؒ فرماتے ہیں اس سے مراد شفاعت ہے ۔

ابن ابی شیبہ میں ہے ،حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

 ہم وہ لوگ ہیں جن کے لیے اللہ تعالیٰ نے آخرت دنیا پر پسند کر لی ہے ، پھر آپ نے آیت  وَلَسَوْفَ يُعْطِيكَ رَبُّكَ فَتَرْضَى  کی تلاوت فرمائی۔

أَلَمْ يَجِدْكَ يَتِيمًا فَآوَى (۶)

کیا اس نے یتیم پا کر جگہ نہیں دی

آپ کی یتیمی کی حالت میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے آپ کا بچاؤ کیا ۔ اور آپ کی حفاظت کی اور پرورش کی اور مقام و مرتبہ عنایت فرمایا۔

 آپ کے والد کا انتقال تو آپ کی پیدائش سے پہلے ہی ہو چکا تھا چھ سال کی عمر میں والدہ صاحبہ کا بھی انتقال ہو گیا۔ اب آپ دادا کی کفالت میں تھے لیکن جب آٹھ سال کی آپ کی عمر ہوئی تو دادا کا سایہ بھی اٹھ گیا۔ اب آپ اپنے چچا ابو طالب کی پرورش میں آئے، ابو طالب دل و جان سے آپ کی نگرانی اور امداد میں رہے ۔ آپ کی پوری عزت و توقیر کرتے اور قوم کی مخالفت کے چڑھتے طوفان کو روکتے رہتے تھے اور اپنی جان کو بطور ڈھال کے پیش کردیا کرتے تھے ۔ کیونکہ چالیس سال کی عمر میں آپ کو نبوت مل چکی تھی اور قریش سخت تر مخالفت بلکہ دشمن جان ہوگئے تھے ابو طالب باوجود بت پرست مشرک ہونے کے آپ کا ساتھ دیتا تھا۔ اور مخالفین سے لڑتا بھڑتا رہتا تھا۔

یہ تھی منجانب اللہ حسن تدبیر کہ آپ کی یتیمی کے ایام اسی طرح گزرے اور مخالفین سے آپ کی خدمت اس طرح لی ، یہاں تک کہ ہجرت سے کچھ پہلے ابوطالب بھی فوت ہوگئے ، اب سفہاء و جہلا قریش اٹھ کھڑے ہوئے تو پروردگار عالم نے آپ کو مدینہ تشریف کی طرف ہجرت کرنے کی رخصت عطا فرمائی اور اوس و خزرج جیسی قوموں کو آپ کا انصار بنا دیا۔ ان بزرگوں نے آپ کو اور آپ کے ساتھیوں کو جگہ دی۔ مدد کی ، حفاظت کی اور مخالفین سے سینہ سپر ہو کر مردانہ وار لڑائیاں کیں۔ اللہ ان سب سے خوش رہے ۔

 یہ سب کا سب اللہ کی حفاظت اور اس کی عنایت احسان اور اکرام سے تھا۔

وَوَجَدَكَ ضَالًّا فَهَدَى (۷)

اور تجھے راہ بھولا پا کر ہدایت نہیں دی

پھر فرمایا کہ راہ بھولاپاکر صحیح راستہ دکھا دیا جیسے اور جگہ ہے

وَكَذَلِكَ أَوْحَيْنَآ إِلَيْكَ رُوحاً مِّنْ أَمْرِنَا مَا كُنتَ تَدْرِى مَا الْكِتَـبُ وَلاَ الإِيمَـنُ وَلَـكِن جَعَلْنَـهُ نُوراً نَّهْدِى بِهِ مَن نَّشَآءُ مِنْ عِبَادِنَا (۴۲:۵۲)

اسی طرح ہم نے اپنے حکم سے تمہاری طرف روح کی وحی کی ۔ تم یہ بھی نہیں جانتے تھے کہ ایمان کیا ہے ؟ تمہیں نہ کتاب کی خبر تھی بلکہ ہم نے اسے نور بنا کر جسے چاہا ہدایت کردی۔

بعض کہتے ہیں کہ مراد یہ ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم بچپن میں مکہ کی گلیوں میں گم ہوگئے تھے اس وقت اللہ نے لوٹا دیا۔

بعض کہتے ہیں شام کی طرف اپنے چچا کے ساتھ جاتے ہوئے رات کو شیطان نے آپ کی اونٹنی کی نکیل پکڑ کر راہ سے ہٹا کر جنگل میں ڈال دیا۔ پس جبرائیل علیہ السلام آئے اور پھونک مار کر شیطان کو تو حبشہ میں ڈال دیا اور سواری کو راہ لگا دیا۔

 بگوی نے یہ دونوں قول نقل کئے ہیں

وَوَجَدَكَ عَائِلًا فَأَغْنَى (۸)

اور تجھے نادار پا کر تونگر نہیں بنا دیا۔

اللہ فرماتا ہے کہ بال بچوں والے ہوتے ہوئے تنگ دست پاکر ہم نے آپ کو غنی کر دیا، پس فقیر صابر اور غنی شاکر ہونے کے درجات آپ کو مل گئے ۔ صلوات اللہ وسلامہ علیہ

حضرت قتادہ فرماتے ہیں یہ سب حال نبوت سے پہلے کے ہیں

 بخاوی و مسلم وغیرہ میں ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

 تونگری مال و اسباب کی زیادتی سے نہیں بلکہ حقیقی تونگری وہ ہے جس کا دل بےپرواہ ہو۔

صحیح مسلم شریف میں ہے:

 اس نے فلاح پالی جسے اسلام نصیب ہوا اور جو کافی ہوا اتنا رزق بھی ملا، اللہ کے دئیے ہوئے پر قناعت کی توفیق بھی ملی ،

فَأَمَّا الْيَتِيمَ فَلَا تَقْهَرْ (۹)

پس یتیم پر تو بھی سختی نہ کیا کر۔ ‏

پھر فرمایا ہے کہ یتیم کو حقیر جان کر نہ ڈانٹ ڈپٹ کر بلکہ اس کے ساتھ احسان و سلوک کر اور اپنی یتیمی کو نہ بھول،

قتادہ ؓفرماتے ہیں یتیم کے لیے ایسا ہو جانا چاہیے جیسے سگا باپ اولاد پر مہربان ہوتا ہے ،

وَأَمَّا السَّائِلَ فَلَا تَنْهَرْ (۱۰)

اور نہ سوال کرنے والے کو ڈانٹ ڈپٹ۔ ‏

سائل کو نہ جھڑک جس طرح تم بےراہ تھے اور اللہ نے ہدایت دی تو اب جو تم سے علمی باتیں پوچھے صحیح راستہ دریافت کرے تو تم اسے ڈانٹ ڈپٹ نہ کرو، غریب مسکین ضعیف بندوں پر تکبر تجبر نہ کرو، انہیں ڈانٹو ڈپٹو نہیں برا بھلا نہ کہو سخت سست نہ بولو، اگر مسکین کو کچھ نہ کرو، تو بھی بھلا اچھا جواب دے۔ نرمی اور رحم کا سلوک کر،

وَأَمَّا بِنِعْمَةِ رَبِّكَ فَحَدِّثْ (۱۱)

اور اپنے رب کی نعمتوں کو بیان کرتا رہ۔ ‏

فرمایا کہ اپنے رب کی نعمتیں بیان کرتے رہو۔

 یعنی جس طرح تمھاری فقیری کو ہم نے تونگری سے بدل دیا، تم بھی ہماری ان نعمتوں کو بیان کرتے رہو، اسی لیے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی دعاؤں میں یہ بھی تھا

 

واجعلنا شاکرین لنعمتک مثنین بھا علیک قابیلھا واتمھا علینا

اللہ ہمیں اپنی نعمتوں کی شکر گزاری کرنے والا ان کی وجہ سے تیری ثنا بیان کرنے والا ان کا اقرار کرنے والا کردے اور ان نعمتوں کو ہم پر پورا کر دے۔

ابو نضرہ فرماتے ہیں کہ مسلمانوں کا یہ خیال تھا کہ نعمتوں کی شکر گزاری میں یہ بھی داخل ہے کہ ان کا بیان ہو،

 مسند احمد کی حدیث میں ہے:

 جس نے تھوڑے پر شکر نہ ادا کیا اس نے زیادہ پر بھی شکر نہیں کیا۔ جس نے لوگوں کی شکر گزاری نہ کی اس نے اللہ کا شکر بھی ادا نہیں کیا۔ نعمتوں کا بیان بھی شکر ہے اور ان کا بیان نہ کرنا بھی ناشکری ہے ، جماعت کے ساتھ رہنا رحمت کا سبب ہے اور تفرقہ عذاب کا باعث ہے ،

 اس کی اسناد ضعیف ہے ۔

بخاری و مسلم میں حضرت انسؓ سے مروی ہے:

 مہاجرین نے کہا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! انصار سارےکا سارا اجر لے گئے فرمایا:

نہیں جب تک کہ تم ان کے لیے دعا کیا کرو اور ان کی تعریف کرتے رہو،

 ابو داؤد میں ہے

 اس نے اللہ کا شکر ادا نہ کیا جس نے بندوں کا شکر ادا نہ کیا۔

 ابو داؤد کی حدیث میں ہے:

 جسے کوئی نعمت ملی اور اس نے اسے بیان کیا تو وہ شکر گزار ہے اور جس نے اسے چھپا یا اس نے ناشکری کی ۔

 اور روایت میں ہے:

 جسے کوئی عطیہ دیا جائے اسے چاہیے کہ اگر ہو سکے تو بدلہ اتار دے اگر نہ ہو سکے تو اس کی ثنا ءبیان کرے جس نے ثنا ءکی وہ شکر گزا ر ہوا اور جس نے اس نعمت کا اظہار نہ کیا اس نے ناشکری کی ۔ (ابو داؤد)

مجاہد فرماتے ہیں یہاں نعمت سے مراد نبوت ہے ،

 ایک روایت میں ہے کہ قرآن مراد ہے ،

حضرت علی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں :

طلب یہ ہے کہ جو بھلائی کی باتیں آپ کو معلوم ہیں وہ اپنے بھائیوں سے بھی بیان کرو،

 محمد بن اسحاق کہتے ہیں جو نعمت و کرامت نبوت کی تمہیں ملی ہے اسے بیان کرو اس کا ذکر کرو اور اس کی طرف لوگوں کو دعوت دو۔

چنانچہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے والوں میں سے جن پر آپ کو اطمینان ہوتا در پردہ سب سے پہلے پہل دعوت دینی شروع کی اور آپ کر نماز فرض ہوئی جو آپ نے ادا کی ۔

*********

Copy Rights:

Zahid Javed Rana, Abid Javed Rana, Lahore, Pakistan

Pages Viewed since 2016

AmazingCounters.com